جلوا ہے ، ترا طُور یارب

جلوا ہے ، ترا طُور یارب


جلوا ہے ، ترا طُور یارب

ہے جلوہ ترا ان میں مستور یارب

تُو خالق ہے مالک ہے قرآن تیرا

دیا تونے بندوں کو دستور یارب

یقیں ہے ، کہ شہ رگ سے بھی ہے قریں تر

نہیں ہے کسی سے بھی تُو دور یارب

زمین و زماں ہو ، مکاں لا مکاں ہو

مسلّم ہے ہرجا ترا نور یارب

ہر اک شر سے میرے وطن کو بچانا

رہے سب بلائوں سے یہ دور یارب

نہ آئے گماں بھی کبھی ما سِوا کا

ترا ذکر ہو میرا مقدور یارب

کرم ہر نفس اپنے طاہرؔ پہ کرنا

رہے زندگی بھر یہ مسرور یارب

طاہرسلطانی

ایک تبصرہ شائع کریں

0 تبصرے