ہر حمد ترا ہی حق اے کمال والے! بیحد رحیم ہے تو وصفِ جمال والے

ہر حمد ترا ہی حق اے کمال والے! بیحد رحیم ہے تو وصفِ جمال والے

ریختہ پٹولوی


ہر حمد ترا ہی حق اے کمال والے!
بیحد رحیم ہے تو وصفِ جمال والے
اے مالک قیامت! عزّوجلال والے
ہم ہیں تری مدد کے طالب نوال والے
توفیق بندگی دے بخشش خصال والے!


معبود ہے ہمارا ہاں! تو ہی رب العزت
کرتے ہیں تیرے بندے بس تیری ہی عبادت
تجھ سے یہی دعا ہے ہم پر رہے عنایت
ہم کو نہ تو دکھانا اے مالک ہدایت
وہ راہ کہ چلے ہیں جس پر ضلال والے


تیری رضا کے طالب جو کہ سدا رہے ہیں
دنیا میں مستحق فضل و عطا رہے ہیں
اسلام و شرع پر جو دل سے فدا رہے ہیں
دنیا میں جو جلاتے شمع ہدا رہے ہیں
پیرو بنادے ان کا رحمت مثال والے
یہ عرض ریختہؔ ہے شمع ہدیٰ جلادے
ایماں کی روشنی سے عالم کو جگمگادے
گمراہی وجہالت ہردل سے تو مٹادے
ایمان اور عمل کی ہر سو ہوا چلادے
ہیں ہاتھ اٹھائے تیرے آگے سوال والے

Post a comment

0 Comments