سب زمینوں کا آسماں تو ہے کون سمجھے کہاں کہاں تو ہے

سب زمینوں کا آسماں تو ہے کون سمجھے کہاں کہاں تو ہے

رومانہ رومیؔ (کراچی)


سب زمینوں کا آسماں تو ہے
کون سمجھے کہاں کہاں تو ہے


تیرے جلووں سے ہے جہاں روشن
گرچہ ہر آنکھ سے نہاں تو ہے


ساری دنیائیں دسترس میں تری
سب جہانوں کا پاسباں تو ہے


تیری یکتائی کا کرشمہ ہے
دیکھتی ہوں جدھر عیاں تو ہے


ہر تجلی ہے تیرے ہونے سے
نور ہی نور ہے جہاں تو ہے


میری سب منزلیں ترے دم سے
میرے رستوں کا ہر نشاں تو ہے


ہے اجالوں کی ہم سفر رومیؔ
اس کی سوچوں کی کہکشاں تو ہے

Post a comment

0 Comments