Dekh kar us gul e runa ke munwar aariz parvez ashrafi

Dekh kar us gul e runa ke munwar aariz parvez ashrafi

دیکھ کر اس گلِ رعنا کے منور عارض
اپنے کر دیتا ہـے قربان گلِ تر عارض

چاندنی سورہ والشمس کی دیتے ہیں بکھیر
زلف والیل کی چلمن سے نکل کر عارض

تب صبا ان کا تو معیارِ لطافت سمجھی
دیکھے جس وقت رگِ گل نے وہ چھوکر عارض
منبر حسن پہ ہے، ۔۔۔۔۔۔۔ خطبہِ خوشبوِ لطیف
مرکز حسن و لطافت کے ہیں محور عارض

"کونی برداً و سلاماً" کے جو بن جائیں سبب
ہیں وہی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ باغ خلیلی کے گل تر عارض

جن کی تمثیل سے عاجز رہی چشم امکاں
ایسے دریائے تقدس کے ہیں گوہر عارض

تربتر ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ بارش الہام میں ہو کر ہر دم
دے سلامی جنہیں ۔ جبریل کے شہپر، عارض

جن کو قسمت سے خدا بخشے نبی کی نسبت
ہیں وہ ۔۔۔۔۔۔۔۔ پرؔویز ! مقدر کے سکندر عارض

پرؔویز اشرفی احمدآبادی

Dekh kar us gul e runa ke munwar aariz parvez ashrafi
Dekh kar us gul e runa ke munwar aariz parvez ashrafi

ایک تبصرہ شائع کریں

0 تبصرے