بے اماں ہوں امان دے اللہ

بے اماں ہوں امان دے اللہ

بے اماں ہوں امان دے اللہ
رحمتوں کا مکان دے اللہ
میں کھلی دھوپ میں پھروں کب تک
مجھ کو اک ٍسائبان دے اللہ
آندھیاں گلستاں میں در آئیں
تتلیوں کو امان دے اللہ
شعر میں گفتگو کروں تیری
مجھ کو ایسی زبان دے اللہ
جھو کی بے امان دھرتی پر
سچ کی چادر کو تان دے اللہ
تجھ سے یہ التجا نذیرؔ کی ہے
بے اماں کو امان دے اللہ

نذیرفتح پوری

ایک تبصرہ شائع کریں

0 تبصرے