ملک فلک ہیں ترا ہی پرتو، چمک دمک میں جمال تیرا

ملک فلک ہیں ترا ہی پرتو، چمک دمک میں جمال تیرا

اسرار احمد رازیؔ بستوی (نئی دہلی)


ملک فلک ہیں ترا ہی پرتو، چمک دمک میں جمال تیرا
ہے خیر و شر پر تری ہی قدرت، ہے بحر و بر میں کمال تیرا


مجھے عطا کر تو چشم بینا، تو گوشِ شنوا بھی دیدے یار ب!
کروں میں کیسے ترا تصور؟ نظر میں آنا محال تیرا


گگن گگن ہیں ترے ہی جلوے، چمن چمن میں تری ہی رنگت
جہت جہت ہے ترا ہی نغمہ، جنوب تیرا شمال تیرا


نگر نگر ہے ترا چرچا، ہے قریہ قریہ ترا ہی کلمہ
قلم قلم پر تری ہی ہیبت، علم علم ہے جلال تیرا


شجر شجر ہے ترا نمازی، ہے خوف تیرا حجر حجر میں
زباں زباں پر تری ثنائیں، بیاں بیاں میں خیال تیرا


ہے لمحہ لمحہ خطا میں ڈوبا، ہے چپہ چپہ گنہ کا شاہد
بچالے ہم کو غضب سے مولا، نہ آئے ہم پر وبال تیرا


نفس نفس میں تری صدا ہے، جرس جرس میں تری ندا ہے
کرے نہ کیوں تری حمد رازیؔ، ہے مصرع مصرع وصال تیرا

Post a comment

0 Comments