دوسرا کون ہے جہاں تو ہے کون جانے تجھے کہاں تو ہے

دوسرا کون ہے جہاں تو ہے کون جانے تجھے کہاں تو ہے

ظہیر غازی پوری


دوسرا کون ہے جہاں تو ہے
کون جانے تجھے کہاں تو ہے
لاکھ پردوں میں تو ہے بے پردہ
سو نشانوں میں بے نشاں تو ہے
تو ہے خلوت میں تو ہے جلوت میں
کہیں پنہاں کہیں عیاں تو ہے
نہیں تیرے سوا یہاں کوئی
میزباں تو ہے میہماں تو ہے
نہ مکاں میں نہ لا مکاں میں کچھ
جلوہ فرما یہاں وہاں تو ہے
رنگ تیرا چمن میں بو تیری!
خوب دیکھا تو باغباں تو ہے
محرمِ راز تو بہت ہیں امیرؔ
جس کو کہتے ہیں راز داں تو ہے

Post a comment

0 Comments