تو رئوف ہے تو کریم ہے تو غفور ہے تو رحیم ہے

تو رئوف ہے تو کریم ہے تو غفور ہے تو رحیم ہے

قدرالقادری (حیدر آباد)


تو رئوف ہے تو کریم ہے
تو غفور ہے تو رحیم ہے


مرے حال سے تو ہے باخبر
تو خبیر ہے تو علیم ہے


تری حمد کیسے بیاں کروں
تری شان سب سے عظیم ہے


ترا فیض ہی تو ہے سر بہ سر
یہ جو میرا ذوقِ سلیم ہے


ترے حکم سے ہے رواں دواں
سر گلستاں جو نسیم ہے


کوئی تجھ سے پہلے کہاں ہوا
تری ذات سب سے قدیم ہے


ترے دم سے قدرؔ کی قدر ہے
کہاں اس کا کوئی ندیم ہے

Post a comment

0 Comments