رات رورو کے جو دعا مانگی رب سے تاثیرِ بر ملامانگی

رات رورو کے جو دعا مانگی رب سے تاثیرِ بر ملامانگی

 رات رورو کے جو دعا مانگی


رب سے تاثیرِ بر ملامانگی


تاج مانگا نہ تخت ہی مانگا


رب سے بس خیر کی دعامانگی


رکّھی  ظالم سے کب امیدِ کرم


ربِّ رحمٰن  سے عطا مانگی


 مانگی اپنے خدا سے درویشی


میںنے کب مخملی قبا مانگی


شام غربت کی بھی نہیں چاہی



اورنہ بوسیدہ سی قبا  مانگی


خضرسی عمر بھی نہیں چاہی


 نہ کوئی مسندِ صفا  مانگی


چاہی بادِ صبا نہ رنگِ افق


 نہ کبھی با غ کی فضامانگی


قبر میںروشنی بھی چاہی ہے


   اور کعبے کی  نم  فضامانگی


 رازداں ہوخطا معاف میری


چیزکیا چاہئے تھی کیا مانگی


ہم نے بزمِ خیال سے اپنی


لذتِ یادِ مصطفی  مانگی


نعت حسان جیسی میں بھی کہوں


رب سے روروکے یہ دعامانگی





غلام ربانی فدا


ایک تبصرہ شائع کریں

0 تبصرے