حقیر ذرے کو چاہے تو آسماں کردے

حقیر ذرے کو چاہے تو آسماں کردے

مناجات



حقیر ذرے کو چاہے تو آسماں کردے
تُو بے کراں ہے جسے چاہے بے کراں کردے
عیاں کو پل میں نہاں، اور نہاں، عیاں کردے
اگر تُو چاہے تو پیدا نئے جہاں کردے
خشوع و شوق بڑھا دے مرا عبادت میں
غلافِ کعبہ سے میری اَنا نہاں کردے
نہاں، نہاں ہے، نہاں کو، نہاں ہی رہنے دے
عیاں جو مجھ سے نہاں ہے، اسے عیاں کردے
کدورتوں سے رہے صاف آئینہ دل کا
غنی بنادے اُسے جو مرا زیاں کردے
بنادے خواجہء ہر دوسرا صلی اللہ علیہ وسلم کا متوالا
درودِ پاک سے جاری دل و زباں کردے
میں مشتِ خاک ہوں مولٰی، اُڑا کے خاک مری
روش روش، مجھے طیبہ میں، جاوداں کردے
ہے تُو ہی مالکِ لوح و قلم، علیم و حکیم
جسے تُو چاہے اُسے صاحبِ بیاں کردے
صریرِ خامہء اختر بنے، نوائے سروش
سخن، ہمارے تخیل کا آسماں کردے
(اختر علی خان اختر چھتاروی)

ایک تبصرہ شائع کریں

0 تبصرے