نعت رسول اکرم ﷺ - کاوشِ فکر - عثمان غنی آسؔی

نعت رسول اکرم ﷺ - کاوشِ فکر - عثمان غنی آسؔی

≈نعت رسول اکرم ﷺ≈

جب بھی آنکھوں نے مری گنبدِ خضرا دیکھا
نور میں ڈوبا ہوا اپنا سراپا دیکھا

معجزہ یہ بھی شہ دیں کا ہے بیشک؛ ورنہ
سوکھے تھن سے بھی کبھی دودھ نکلتا دیکھا؟

یہ مدینہ ہے مقام اس کا خدا ہی جانے
تاج والوں کو بھی اس خاک پہ جھکتا دیکھا

آپ کے حکم پہ انسان کیا کنکریوں کو
مشتِ بوجہل میں پڑھتے ہوئے کلمہ دیکھا

مثل خورشید زمیں پر بھی نگاہوں نے مری
ان کے دربار کا ہر ذرہ چمکتا دیکھا

جس پہ ہونے کو فدا آئے تھے دنیا میں علی
آنکھ کھولی تو وہی جلوۂ زیبا دیکھا

صبح دیکھی نہ کوئی صبحِ ولادت جیسی
شبِ معراج کے دولھا سا نہ دولھا دیکھا

نور والے کا ہوا اس پہ جو فیضانِ نظر
محفلِ نعت میں مدحت کا اجالا دیکھا

جو محبت میں تڑپتا رہا ان کی ہردم
اوج پر اس کے مقدر کا ستارہ دیکھا

جس نے روحوں کو بھی بخشی ہے شفا اے آسؔی
اس پیمبر سا نہیں کوئی مسیحا دیکھا
_________________________
عثمان غنی آسؔی انصاری
منڈیروی 

Post a comment

0 Comments