تو رئوف ہے تو رحیم ہے تو کریم ہے توغفور ہے

تو رئوف ہے تو رحیم ہے تو کریم ہے توغفور ہے

شاعرؔ لکھنوی


تو رئوف ہے تو رحیم ہے تو کریم ہے توغفور ہے
تو جمال ہے تو کمال ہے تو یقین ہے تو شعور ہے


تو چھپا ہے آنکھ میں اس طرح کہ نفس نفس میں ظہور ہے
ترا پردے پردے میں عکس ہے ترا ذرّے ذرے میں نور ہے


وہ مکان ہو کہ ہو لامکاں تری ذات سب میں رواں دواں
کہیں نغمۂ سرِ عرش ہے کہیں جلوۂ سرِ طور ہے


کہاں اہل میں تری حمد کا کہ ہوں ایک شاعرِؔ بے نوا
ترا ذکر ہے مری زندگی ترا ذکر لب پہ ضرور ہے

Post a comment

0 Comments