ترا غم ہی میری حیات ہے، ترا ذکر ہی مری زندگی تری آرزو، تری جستجو، تری بندگی مری زندگی

ترا غم ہی میری حیات ہے، ترا ذکر ہی مری زندگی تری آرزو، تری جستجو، تری بندگی مری زندگی

سید احمد سحرؔ شاہجہاں پوری


ترا غم ہی میری حیات ہے، ترا ذکر ہی مری زندگی
تری آرزو، تری جستجو، تری بندگی مری زندگی


شب و روز لب پہ یہی دعا، ہو نصیب مجھ کو تری رضا
ہے تری رضا کی جو تشنگی، وہی تشنگی مری زندگی


یہ مہ و نجوم، یہ کہکشاں، یہ جو ذرّہ ذرّہ ہے ضو فشاں
ہیں ترے جمال کی جھلکیاں، یہ جمال ہی مری زندگی


یہ فضا میں گونجتے چہچہے، یہ اذانِ صبح، یہ زمزمے
یہی چہچہے، یہی زمزے، یہی نغمگی مری زندگی


مرے لب پہ حمد و ثنا رہے ترا نام وردِ زباں رہے
اسی بے خودی میں رہا کروں یہی بے خودی مری زندگی


جو مے اَلَسْتُ بِرَبِّکُم ْ کا ازل میں جام پیا سحرؔ
وہی کیف تو مری جان ہے وہ سرور ہی مری زندگی

ایک تبصرہ شائع کریں

0 تبصرے